حماس کا اسرائیل کی وحشیانہ بمباری بند ہونے تک کسی بھی معاہدے کا حصہ نہیں بننے کا فیصلہ

اسماعیل ہانیہ فائل فوٹو اسماعیل ہانیہ

حماس نے دوٹوک انداز میں کہا ہے کہ اسرائیلی کی وحشیانہ بمباری، فسطینی نسل کشی، فاقوں اور محاصروں کے ہوتے ہوئے کیسے کسی بھی معاہدے کا حصہ بن سکتے ہیں۔

العربیہ نیوز کے مطابق حماس کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا کہ آج ہم نے ثالثوں کو اپنے واضح مؤقف سے آگاہ کر دیا کہ اگر قابض افواج غزہ میں ہمارے لوگوں کے خلاف جنگ اور جارحیت روک دیں تو ہم ایک مکمل معاہدہ طے کرنے کے لیے تیار ہیں۔

حماس نے خبردار کیا کہ ایسا نہیں ہوسکتا کہ صیہونی ریاست وحشیانہ بمباری بھی جاری رکھے اور ہم اُن کے ساتھ مذاکرات کرتے رہیں۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ صرف اُسی صورت میں یرغمالیوں اور قیدیوں کے تبادلے سمیت ایک “مکمل معاہدے” کے لیے تیار ہوں جب اسرائیل جارحیت سے باز آئے اور بمباری روک دے۔

بیان میں کہا گیا کہ فلسطین کی دیگر مزاحمتی تنظیمیں بھی غزہ اور رفح میں اسرائیلی جارحیت، محاصرے، فاقے اور نسل کشی کے ہوتے ہوئے کسی معاہدے کا حصہ بننا قبول نہیں کریں گی۔

دوسری جانب اسرائیل نے کہا ہے کہ ہماری تباہی پر تلے سرگرم گروہوں کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کے لیے پُرعزم ہیں۔ رفح میں جاری فوجی کارروائیاں اسی عزم کے تکمیل کا حصہ ہے۔

خیال رہے کہ حماس اور اسرائیل کے درمیان کسی جنگ بندی تک پہنچنے کے لیے قطر، مصر، اردن اور امریکا کی ثالثی میں طویل عرصے سے جاری فریقین کے درمیان مذاکرات تاحال کسی نتیجے پر نہیں پہنچ سکے اور بار بار تعطل کا شکار ہو رہے ہیں۔

install suchtv android app on google app store