قانون تحفظ اطفال کے حوالے سے سعودی حکومت نے کڑا قدم اٹھا لیا

قانون تحفظ اطفال کے حوالے سے سعودی حکومت نے کڑا قدم اٹھا لیا فائل فوٹو قانون تحفظ اطفال کے حوالے سے سعودی حکومت نے کڑا قدم اٹھا لیا

سعودی پبلک پراسیکیوشن نے قانون تحفظ اطفال کے حوالے بعض نکات کی وضاحت کی ہے، جس کے مطابق بچوں کے ساتھ کیے جانے والے غیر قانونی سلوک پر سخت سزائیں دی جائیں گی۔

سعودی ذرائع ابلاغ کے مطابق پبلک پراسیکیوشن نے ٹویٹر پر بیان میں کہا ہے کہ سعودی عرب میں بچوں کے حقوق اور ان کے تحفظ کی ضمانتیں اسلامی شریعت اور سعودی قانون کے تحت مقرر ہیں، کسی بھی عنوان سے بچوں کے حقوق متاثر نہیں کیے جاسکتے۔

پبلک پراسیکیوشن کے لائحہ عمل کے مطابق لاپروائی اور اذیت رسانی بچوں پر تشدد میں شمار کی جائے گی اور اسے ان کا استحصال مانا جائے گا۔

بیان میں تحفظ اطفال قانون کے لائحہ عمل میں ان صورتوں کے بارے میں بھی بتایا گیا ہے جو بچوں کس استحصال کرنے کے جرم میں شمار کی جائیں گی۔

ان میں اذیت رسانی، بچوں کے ساتھ لاپروائی، بچوں کو نگرانی کے بغیر چھوڑ دینا یا مارکیٹنگ میں ان سے فائدہ اٹھانا، اخلاق سوز ابلاغی پروگراموں میں بالواسطہ یا بلاواسطہ بچوں سے کام لینا، مجرمانہ اور نامناسب سرگرمیوں میں بچوں کو شریک کرنا، بچوں کے عقائد، افکار اور ان کی سرگرمیوں کو خطرات میں ڈالنا یا معاشی طور پر ان سے فائدہ اٹھانا شامل ہیں۔

بیان میں مزید کہا گیا کہ 12 برس سے کم عمر کے بچوں سے شاہراہ پر اسکوٹر یا موٹر سائیکل چلوانا، بچوں کو شاہراہ پر موٹر سائیکل چلانے کی اجازت دینا۔

اس حوالے سے لاپرواہی برتنا اور بارہ برس سے کم عمر کے بچوں کو موٹر سائیکل کرایے پر دینا بھی بچوں کا استحصال کرنے میں شمار کیا جائے گا اور جو لوگ انہیں کرائے پر موٹر سائیکل دیں گے وہی بچوں اور ان کی وجہ سے دوسروں کو پہنچنے والے نقصانات کے ذمہ دار ہوں گے۔

subscribe YT Channel install suchtv android app on google app store