کورونا وائرس: یورپی ممالک کا بھی پاکستانی طرزِعمل کےمطابق لاک ڈاؤن لگانے کا فیصلہ سامنے آگیا

کورونا لاک ڈاؤن فائل فوٹو کورونا لاک ڈاؤن

یورپی ممالک کا مستقبل سمارٹ یا سلیکٹو لاک ڈاون ہے جب کہ جرمنی، اٹلی اور پرتگال نے تو سمارٹ لاک ڈاون کا فیصلہ کرلیا ہے۔

یورپی ممالک کے فیصلے پر ردعمل دیتے ہوئے عمران خان نے کہا ہے کہ ان کی ٹیم نے سب سے پہلے سمارٹ لاک ڈاون لگایا اور مجھے ان پر فخر ہے کہ کورونا سے نمٹنے میں میری مدد کی۔

امریکی اخبار بلومبرگ نے اپنی ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ وبا سے بچاو کےلیے یورپی ممالک خصوصا جرمنی ، اٹلی اور پرتگال سمارٹ لاک ڈاون پر غور کرتے ہوئے پورے ملک کے بجائے ان مخصوص علاقوں کو بند کرنے کا سوچ رہے ہیں جہاں وبا کی شدت زیادہ ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ویکسین کے انتظار تک معمولات زندگی بحال رکھنے کا یہی واحد حل ہے اور اس کے نتائج پورے ملک کو بند کرنے سے بہتر نکلیں گے۔

جب کہ طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ اس حوالے سے سخت ترین اقدامات کرکے وبا پرزیادہ بہتر طریقے سے قابو پایا جاسکتا ہے۔ جرمنی جہاں وبا خوب پھیلی وہاں گوئیٹرسلو اور وارینڈروف جیسے شدید متاثرہ علاقوں میں لاک ڈاون کیا گیا۔ اٹلی نے بھی مولیزاور روم جیسے شدید متاثرہ علاقوں میں جو پابندیاں لگائی گئیں وہ دیگر علاقوں میں نہیں تھیں اسی طرح جنوبی ریجن کیلے بیریا نے پالمی میں دوسرے حصوں سے آنے والوں کے لیے قرنطینہ لازمی قرار دیا ہے۔

ادھر پرتگال نے بھی کورونا کے دوبارہ کیسز سامنے آنے پر لزبن کے کئی علاقوں کو مکمل سیل کرنے کا حکم دیا ہے۔ بلومبرگ کی خبر پر تبصرہ کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے ٹویٹ کیا ہے کہ سمارٹ لاک ڈاؤن اختیارکرنےوالوں میں میری ٹیم سرفہرست ہے۔مجھےفخر ہےکہ کورونا سے پیدا شدہ بحرانی کیفیت میں وطنِ عزیزکو پیہم درست سمت میں رکھنےکیلئےیہ تدبیر میرےکام آئی۔

آج سے اگر ہم ایس او پیز کالحاظ رکھتےہیں توبحران کی سنگینی سے بخوبی نجات پالیں گےانشاءاللہ۔

subscribe YT Channel install suchtv android app on google app store