ون ڈے ٹیم کی قیادت سے ہٹانے کا بورڈ نے کوئی مشاورت نہیں کی: کوہلی

بھارت کی ٹیسٹ ٹیم کے کپتان ویرات کوہلی فائل فوٹو بھارت کی ٹیسٹ ٹیم کے کپتان ویرات کوہلی

بھارت کی ٹیسٹ ٹیم کے کپتان ویرات کوہلی نے کہا ہے کہ سلیکشن کمیٹی نے ون ڈے ٹیم کی قیادت سے ہٹانے کے بارے میں صرف ڈیڑھ گھنٹہ قبل انہیں آگاہ کیا تھا اور اس بارے میں بورڈ نے کوئی مشاورت نہیں کی تھی۔

کرک انفو کے مطابق بدھ کو پریس کانفرنس کرتے ہوئے ویرات کوہلی نے کہا کہ بورڈ آف کنٹرول فار کرکٹ ان انڈیا(بی سی سی آئی) نے ان سے ون ڈے ٹیم کی قیادت سے ہٹائے جانے کے حوالے سے کوئی مشاورت نہیں کی تھی۔

ان کا کہنا تھاکہ 16ستمبر کو ان کی جانب سے ٹی20 ٹیم کی قیادت سے دستبرداری اور 8دسمبر کو دورہ جنوبی افریقہ کے لیے ٹیسٹ اسکواڈ کے اعلان تک ان کی بورڈ سے ون ڈے ٹیم کی قیادت سے ہٹائے جانے کے حوالے سے کسی بھی قسم کی گفتگو نہیں ہوئی تھی۔

انہوں نے کہا کہ جس وقت ٹی20 ٹیم کی قیادت چھوڑنے کا اعلان کیا تھا اس وقت بی سی سی آئی کی اعلیٰ قیادت نے اس فیصلے کو مثبت قرار دیا تھا البتہ کوہلی کی یہ بات بورڈ کے صدر سارو گنگولی کے بیان کے بالکل برعکس ہے جنہوں نے اپنے بیان میں کہا تھا کہ کوہلی کو ان کے فیصلے پر نظرثانی کرنے کی درخواست کی گئی تھی۔

ویرات کوہلی نے انکشاف کیا کہ 8 دسمبر کو ٹیسٹ سیریز کے لیے سلیکشن کی میٹنگ سے ڈیڑھ گھنٹہ قبل ان سے رابطہ کیا گیا تھا اور ون ڈے ٹیم کی قیادت سے ہٹانے کا بتایا گیا، اس سے قبل اس حوالے سے کوئی بات چیت نہیں ہوئی تھی۔

انہوں نے کہا کہ چیف سلیکٹر چیتن شرما نے مجھ سے ٹیسٹ ٹیم پر مشاورت کی جس پر ہم دونوں نے اتفاق کیا اور کال ختم کرنے سے قبل مجھے بتایا گیا کہ پانچوں سلیکٹرز نے فیصلہ کیا ہے کہ اب میں ون ڈے ٹیم کا کپتان نہیں ہوں گا جس پر میں نے جواب دیا کہ ’ٹھیک ہے‘۔

انٹرنیشنل کرکٹ میں 70 سنچریاں بنانے والے بلے باز نے کہا کہ جب میں نے ٹی20 کی قیادت چھوڑنے کا فیصلہ کیا اور اس بارے میں بی سی سی آئی کو آگاہ کیا کہ میں ان وجوہات کی وجہ سے قیادت چھوڑنا چاہتا ہوں تو اس فیصلے کو بہت مثبت طریقے سے لیا گیا، اس حوالے سے بورڈ کی جانب سے کسی قسم کی ہچکچاہٹ کا مظاہرہ نہیں کیا گیا، مجھے قیادت چھوڑنے سے نہیں روکا گیا، مجھے کہا گیا کہ یہ ایک مثبت پیشرفت اور درست فیصلہ ہے۔

ان کا کہناتھا کہ اس وقت میں نے ان سے کہا تھا کہ اگر بی سی سی آئی کو کوئی اعتراض نہ ہو تو میں ون ڈے اور ٹیسٹ ٹیم کی قیادت جاری رکھنا چاہتا ہوں اور میں نے انہیں یہ بھی کہا تھا کہ اگر وہ مجھے ون ڈے اور/یا ٹیسٹ ٹیم کا کپتان نہیں رکھنا چاہتے تو بھی فیصلہ ان کے ہاتھ میں ہے۔

کوہلی نے کہا کہ وہ جنوبی افریقہ میں ون ڈے سیریز کے لیے دستیاب ہیں اور اس حوالے سے ان کے بارے میں جو بھی بات کی گئی ہے وہ جھوٹ پر مبنی ہے کیونکہ انہوں نے سیریز میں آرام کرنے کے حوالے سے کوئی بات نہیں کی۔

انہوں نے کہا کہ میں سلیکشن کے لیے دستیاب تھا اور اب بھی ہوں ، آپ کو یہ سوال مجھ سے نہیں بلکہ ان لوگوں یا ان کے ذرائع سے کرنا چاہیے جو میرے بارے میں یہ سب لکھ رہے ہیں کیونکہ جہاں تک میرا تعلق ہے تو میں ٹیم کو دستیاب ہوں۔

بھارت کی ٹیسٹ ٹیم کے کپتان نے مزید کہا کہ میرا بی سی سی آئی سے کوئی رابطہ ہی نہیں ہوا کہ میں ان سے کہتا کہ میں آرام کرنا چاہتا ہوں، اس سے قبل ماضی میں بھی کچھ اس طرح کی چیزیں سامنے آئی ہیں کہ میں کچھ پروگرام یا ایونٹس وغیرہ میں شرکت کرنا چاہتا ہوں جو بالکل درست نہیں تھیں، وہ لوگ جو میرے بارے میں لکھ رہے ہیں اور ان کے ذرائع کی میری نظر میں بالکل کوئی ساکھ نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ میں جنوبی افریقہ میں بھارت کی ون ڈے ٹیم کے لیے دستیاب ہوں، یہ سوال مجھ سے نہیں بلکہ میرے بارے میں جھوٹ لکھنے والوں سے ہونا چاہیے کیونکہ میری بورڈ سے اس بارے میں کوئی بات نہیں ہوئی کہ میں آرام کرنا چاہتا ہوں۔

انٹرنیشنل کرکٹ کے تینوں فارمیٹس میں 23 ہزار سے زائد رنز بنانے والے بلے باز نے ان تمام واقعات پر مایوسی کا اظہار کیا لیکن ساتھ ساتھ یہ عزم بھی کیا کہ کوئی بھی چیز انہیں بھارت کی نمائندگی سے باز نہیں رکھ سکتی۔

انہوں نے کہا کہ میں نے اس دورے کے لیے اپنی صلاحیتوں کے مطابق بہترین تیاری کی ہے اور کوئی بھی چیز مجھے بھارت کی نمائندگی سے دور نہیں رکھ سکتی۔

ان کا کہنا تھا کہ میدان سے باہر بہت سی چیزیں آئیڈیل یا ایسی نہیں ہوتیں جن کی ہم توقع کررہے ہوتے ہیں لیکن آپ ذاتی حیثیت میں زیادہ کچھ نہیں کر سکتے اور صرف وہی کر سکتے ہیں جو آپ کے کنٹرول میں ہوتی ہیں۔

ویرات کوہلی نے کہا کہ میں ذہنی طور پر تیار اور جنوبی افریقہ جانے کے لیے بہت پرجوش ہوں اور ٹیم کے لیے بہترین کارکردگی دکھانے کی کوشش کروں گا۔

subscribe YT Channel install suchtv android app on google app store