کورونا ویکسین ایک دفعہ لگوانے کے بعد کیا دوبارہ اس کی ضرورت رہے گی؟

کورونا ویکسین فائل فوٹو کورونا ویکسین

انگلینڈ کے چیف میڈیکل افسر نے کہا ہے کہ اس بات کی کوئی گارنٹی نہیں کہ کورونا وائرس سے بچاؤ کی ویکسین ایک دفعہ لگوانے کے بعد دوبارہ اس کی ضرورت نہیں رہے گی۔

انگلینڈ کے چیف میڈیکل آفیسر کرس وائٹی نے متنبہ کیا ہے کہ اگر اس وائرس نے خود کو تبدیل کیا تو ممکن ہے ہر سال ویکسین لگانا پڑے، پروفیسر کرس وائٹی کے مطابق ابھی تک یہ واضح نہیں اور نہ ہی اس بات کی گارنٹی ہے کہ کرونا وائرس کے اثرات کتنے عرصہ تک رہیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ابھی ہمیں اس وائرس سے متعلق مزید اعداد و شمار کی ضرورت ہے کہ کیا ایک شخص کو بار بار ویکسین لگانے کی ضرورت ہے یا نہیں، انہوں نے کہا کہ ویکسین اسکیم کو توسیع دینے کی ضرورت ہے۔

سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کمیٹی اور صحت و سماجی نگہداشت کمیٹی کے سامنے اظہار خیال کرتے ہوئے پروفیسر وائٹی نے کہا کہ ابھی تک ہمیں اس ضمن میں مکمل علم نہیں کہ یہ مختصر، درمیانی مدت یا ہمیشہ کے لیے تحفظ فراہم کرنے والی ویکسین ہے چنانچہ اس بات کے مواقع انتہائی زیادہ ہیں کہ ہمیں ایک بار سے زیادہ یا ہر سال لوگوں کو یہ انجیکشن لگانے پڑیں۔

پروفیسر وائٹی نے اس خطرے کا بھی اظہار کیا کہ یہ وائرس جس قسم کا ہے اس بات کے چانسز بھی ہیں کہ سائنس دانوں کو مکمل طور پر نئے سرے سے یہ ویکسین تیار کرنا پڑے۔

علاوہ ازیں محکمہ صحت کے ترجمان نے اس بات پر زور دیا ہے کہ جس شخص کو کسی قسم کی الرجی ہو اسے کرونا وائرس ویکسین نہیں لگانی چاہیئے کیونکہ اس سے زیادہ مسائل پیدا ہوسکتے ہیں۔

یہ معاملہ اس وقت سامنے آیا جب این ایچ ایس کے چند ورکرز کو یہ ویکسین لگائی گئی تو انہیں فوراً منفی ری ایکشن کا سامنا کرنا پڑا، ابتدائی طور پر ویکسین کی 8 لاکھ خوراکیں موجود ہیں جو 4 لاکھ افراد کو لگائی جائیں گی کیونکہ ایک مریض کو 2 خوراکیں دی جانی چاہیئں۔

علاوہ ازیں عالمی وبا کرونا وائرس سے بچاؤ کے لیے ویکسی نیشن کا عمل آغاز کے پہلے روز ہی پورے برطانیہ میں تبصروں کی زد میں ہے، آدھے سے زائد برطانوی شہریوں نے بغیر ویکسین مسافروں کے فضائی سفر پر پابندی عائد کرنے کی حمایت کا اعلان کیا ہے۔

لوگوں کی بڑی تعداد کا یہ بھی ماننا ہے کہ بسوں اور ٹرینوں میں سفر کرنے کے لیے کرونا ویکسنیشن لازم قرار دی جائے اور ریستوران وغیرہ میں بھی داخلے کے لیے مذکورہ شرط عائد کی جائیں۔

فائزر بائیو ٹیک کمپنی کی طرف سے متعارف کروائی جانے والی ویکسین 95 فیصد مؤثر پائی گئی ہے تاہم بعض لوگوں کے تحفظات بھی اپنی جگہ موجود ہیں۔

برطانیہ میں ویکسنیشن کا آغاز کیا گیا ہے جس میں تاریخ کے سب سے بڑے پیمانے پر حفاظتی ٹیکے لگانے کا عمل شروع ہوا ہے، ابتدائی طور پر 50 اسپتالوں میں حفاظتی ویکسینیشن شروع کی گئی ہے۔ پہلے مرحلے میں 80 سال سے زائد عمر کے لوگوں، کیئر ہومز کے مکینوں اور اسٹاف اور این ایچ ایس کارکنان کو ترجیح دی جائے گی۔

برطانوی وزیر اعظم بورس جانسن کے والد نے بھی کرونا ویکسینیشن کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر میرا نام آگیا تو ویکسین کے لیے ضرور جاؤں گا بلکہ دوسروں کو بھی جانے کی ترغیب دوں گا۔

subscribe YT Channel install suchtv android app on google app store